خامنہ ای کے قریبی گروپوں میں موجود موساد کے سات جاسوس گرفتار

مذکورہ افرادکو موساداور فرانسیسی سفارت خانے کے ساتھ غیر قانونی تعلق رکھنے کے الزام میں حراست میں لیا گیا،ایرانی رکن پارلیمنٹ
تہران :ایرانی میڈیا نے بتایا ہے کہ ایرانی انٹیلی جنس اداروں نے گزشہ ہفتوں کے دوران اسرائیلی انٹیلی جنس ایجنسی “موساد” کے لیے جاسوسی کے الزام میں ایرانی مرشد اعلی اور پاسداران انقلاب کے قریب سمجھے جانے والے پریشر گروپوں کے سات ارکان کو گرفتار کرلیا،میڈیارپورٹس کے مطابقایرانی رکن پارلیمنٹ محمود صادقی نے انکشاف کیا کہ گرفتار ہونے والوں میں سخت گیر مذہبی شخصیت مہدی طائب کے گروپ “عماریون” کے دو ارکان محمد حسین رستمی اور رضا کلپور شامل ہیں۔ ایرانی پاسداران کے انٹیلی جنس ادارے کے ساتھ مربوط “عماریون” کا سربراہ مہدی طائب کا بھائی حسین طائب ہے۔ اس کو ایرانی وزارت اں ٹیلی جنس کے متوازی ادارہ شمار کیا جاتا ہے۔ سال 2009 میں اپوزیشن کی جانب سے شروع ہونے والی سبز تحریک کو کچلنے میں اس ادارے کا بڑا کردار رہا۔اسی سلسلے میں پاسداران کے زیر انتظام انٹیلی جنس ادارے نے کئی معروف گلوکاروں یا جن کو مدّاحین اہلِ بیت” کا نام دیا جاتا ہے.. انہیں گرفتار کر لیا۔ ان کے نام عبدالرضا ہلالی ، روح اللہ بہمنی اور محمد حسین حدادیان ہیں۔ایرانی اخبار نے اس امر کی تصدیق کی ہے کہ مذکورہ افراد کو اسرائیل کے مفاد میں جاسوسی کرنے اورغیر قانونی تعلقات رکھنے کے الزامات میں گرفتار کیا گیا۔

مزید پڑھیں :ایرانی قاتل گینگ کا سرغنہ صدرروحانی کی تاج پوشی کا نگران

ایرانی رکن پارلیمنٹ غلام علی جعفر زادہ نے انسٹاگرام پر اپنے ایک پیغام میں بتایا کہ ان گلوکاروں کو موساد کے ساتھ تعلقات اور فرانسیسی سفارت خانے کے ساتھ غیر قانونی تعلق رکھنے کے الزام میں حراست میں لیا گیا۔ایرانی خبر رساں ایجنسی اِرنا کے مطابق ایرانی عدلیہ کے ترجمان غلام حسین محسنی ایجئی نے ایک پریس کانفرنس کے دوران 2 گلوکاروں کی گرفتاری کی تصدیق کی جن میں سے ایک کو رہا کر دیا گیا جب کہ دوسرے سے ابھی تک پوچھ گچھ جاری ہے۔

newspaper today in urdu:read more

اپنا تبصرہ بھیجیں