سمندر کی گہرائی میں ایلین نما مخلوق کی موجودگی کا انکشاف

خدا کی بنائی ہوئی اس دنیا میں کئی اسرار پوشیدہ ہیں، ہر روز سائنسدان ان اسرار سے پردہ اٹھانے کا دعویٰ کرتے ہیں لیکن ابھی بھی کئی ایسے راز موجود ہیں جن سے لوگ آج تک واقف نہیں ہیں۔دنیا میں ایسی کئی مخلوق ہیں جن کے وجود پر سوال اٹھتا رہتا ہے کیونکہ انہیں آج تک کسی نے نہیں دیکھا ہے یا اگر دیکھا بھی ہے تو انہیں اپنی آنکھوں پر یقین نہیں آیا،ایسی ہی ایک مخلوق کی تصویران دنوں سوشل میڈیا پر وائرل ہورہی ہے جسے ‘‘ایلین کیڑے ’’ کا نام دیا گیا ہے ۔

106 سال پرانا لیکن تازہ فروٹ کیک دریافت

ہوسکتا ہے یہ تصویر دیکھ کر کچھ شائقین اس مخلوق کے وجود پر یقین کرنے سے انکار کردیں یا اسے جھوٹ سمجھیں لیکن یہ عجیب وغریب کیڑا حقیقی زندگی میں موجود ہے ، سائنسدانوں نے اس کیڑے کو یولاجیسکا گینگانٹی کا نام دیا ہے جب کہ اسے ‘‘ایلین کیڑا’’ بھی کہا جاتا ہے اور یہ سمندر میں 3 ہزار فٹ کی گہرائی میں پایا جاتا ہے یہ کیڑا انٹارٹک اوقیانوس کے ساحل پر دیکھا گیا ہے ۔انتہائی خوفناک جسمانی خدوخال والا یہ کڑا پولی نوائیڈ خاندان یعنی اسکیل وارم سے تعلق رکھتا ہے ، اس کیڑے کے جسم پر بہت ساری پتلی پرتیں ہوتی ہیں جو اسے مزید خوفناک بناتی ہیں ، طویل مدت تک اس کیڑے کے وجود کے بارے میں کسی کو معلوم نہیں تھا تاہم اس کی دریافت کے بعد سائنسدان حیران رہ گئے ، رپورٹ کے مطابق یہ کیڑا زیادہ ترریت یا پتھروں کے پیچھے چھپ کر اپنے شکار کا انتظار کرتا ہے اورچھپکلی اس کی پسندیدہ غذا ہے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں