اقبال اور معاشی انصاف کی تلاش۔۔۔(1)

تحریر:فتح محمد ملک

اقبال کی طویل نظم ’’لینن خُدا کے حضور میں‘‘ بڑی حد تک اقبال کی ممنوعہ شاعری میں شمار ہوتی ہے ۔ یہ نظم قارئین ادب میں جتنی مقبول ہے نقادانِ ادب میں اتنی ہی غیر مقبول ہے ۔ اس وقت تک اقبال کی طویل نظموں کی تفہیم و تحسین پر مشتمل دو قابلِ قدر کتابیں شائع ہو چکی ہیں۔ ایک بھارت میں اور دوسری پاکستان میں۔ نامور نقاد پروفیسر اسلوب احمد انصاری کی کتاب ’’اقبال کی تیرہ نظمیں‘‘ اقبال شناسی میں ایک عمدہ اضافہ ہے ۔ ہمارے ہاں پروفیسر رفیع الدین ہاشمی کی تصنیف ’’اقبال کی طویل نظمیں‘‘ اقبالیات کے طالب علموں میں ہاتھوں ہاتھ لی جاتی ہیں۔ یہ بات بہت معنی خیز ہے کہ ’’لینن خُدا کے حضور میں‘‘ہر دو کتابوں میں زیرِ بحث نہیں لائی گئی۔ ہمارے میڈیا کے خُداوند بھی اس عظیم نظم کے فیضان سے محروم چلے آ رہے ہیں۔ الیکٹرانک میڈیا اس نظم سے اُتنا ہی ڈرتا ہے جتنا ہمارے خُداوندانِ مکتب اس سے خوف کھاتے ہیں۔ جو تین طویل نظمیں ’’بالِ جبریل‘‘کی آبرو ہیں یہ نظم اُن میں سے ایک ہے ۔ یادش بخیر، جس زمانے میں ‘‘بالِ جبریل’’ ایم اے اردو کے نصاب میں شامل تھی اُس زمانے میں بھی اس نظم کو ادبیاتِ اُردو کے نصاب سے باہر رکھنے کا اہتمام کر لیا گیا تھا۔

لبرل کی شامت

سوال یہ ہے کہ پاکستان میں تہذیب و سیاست کے اربابِ بست و کشاد مفکرِ پاکستان کی اسلامی انقلابی فکر سے پھوٹنے والی اس نظم کو عملاً سنسرشپ کی نذر کیوں کرتے چلے آ رہے ہیں؟ جواب یہ ہے کہ ہمارا حکمران طبقہ معاشی انصاف کے اسلامی تصورات کو عوام کی نظروں سے چھپائے رکھنا چاہتا ہے ۔ چونکہ یہ طبقہ معاشی انصاف کے اسلامی تصورات کو پاکستان میں نافذ نہیں کرنا چاہتا اس لیے وہ ان تصورات کی مقبولیت سے خائف ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ آج ہم اقبال کے ہاں معاشی عدل و انصاف کی تلاش کی کہانی اس نظم سے شروع کر رہے ہیں۔ یہ نظم اُن دو تین نظموں میں سے ایک ہے جن میں اقبال کی شاعرانہ صناعی اپنے اوجِ کمال پر نظر آتی ہے ۔ اس نظم کی فنی ساخت پرداخت بہت سوچ سمجھ کر کی گئی ہے ۔ اس نیم ڈرامائی نظم کا جو تصوراتی ڈھانچہ تیار کیا گیا ہے وہ تین کرداروں کی گفتگو سے وجود میں آیا ہے ۔ یہ تین کردار ہیں: لینن، فرشتے اور خُدا۔ وفات کے بعد لینن خُدا کی ہستی پر ایمان لے آتے ہیں اور خُدا کی بارگاہ میں اپنے عمل کا حساب پیش کرتے وقت اپنی دہریت پسندی پر ندامت کا اظہار کرتے ہیں۔ آئیے پہلے لینن کی زبانی ذاتِ باری کی حقانیت کا بیان سُنیں:
اے اَنفُسُ و آفاق میں پیدا ترے آیات
حق یہ ہے کہ ہے زندہ و پائندہ تِری ذات
میں کیسے سمجھتا کہ تو ہے یا کہ نہیں ہے
ہر دم متغیر تھے خِرد کے نظریات
محرم نہیں فطرت کے سرودِ ازلی سے
بِینائے کواکب ہو کہ دانائے نباتات
آج آنکھ نے دیکھا تو وہ عالم ہُوا ثابت
میں جس کو سمجھتا تھا کلیسا کے خرافات
ہم بندِ شب و روز میں جکڑے ہوئے بندے
تُو خالقِ اعصار و نگارندۂ آنات!
نظم کا یہ ابتدائی حصہ گویا توبہ کا باب ہے ۔ لینن اپنی دہریت پسندی کی ذمہ داری بڑی حد تک مغرب کے سرمایہ داری نظام، اس نظام کے پروردہ علوم و فنون اور اس نظام کی کوکھ سے پیدا ہونے والے فرنگی استعمار پر ڈالتے ہیں۔ ہر دم بدلتے ہوئے نظریات سے عبارت بے خُدا تہذیب میں پنپتے ہوئے علوم کی نارسائی کا یہ عالم ہے کہ:
محرم نہیں فطرت کے سرودِ ازلی سے
بینائے کواکب ہو کہ دانائے نباتات
یورپ میں بہت روشنء علم و ہنر ہے
حق یہ ہے کہ بے چشمہ حیواں ہے یہ ظلمات
یہ علم ، یہ حکمت ، یہ تدبر ، یہ حکومت
پیتے ہیں لہو ، دیتے ہیں تعلیمِ مساوات
بے کاری و عریانی و مے خواری و افلاس
کیا کم ہیں فرنگی مدنیت کے فتوحات
وہ قوم کہ فیضانِ سماوی سے ہو محروم
حد اُس کے کمالات کی ہے برق و بخارات
ایک لا دین تہذیب کی سائنس و ٹیکنالوجی میں ترقی کا حاصل فقط ہلاکت آفرین ہتھیار ہیں۔ فرنگی مدنیت نے اگر ایک طرف بے کاری و افلاس کو پروان چڑھایا ہے تو دوسری جانب عریانی اور اوباشی کو ایک پسندیدہ معاشرتی چلن بنا دیا ہے ۔ لینن حریمِ کبریا میں اس بے خُدا تہذیب کی غارت گری کے خلاف فریادکرتا ہے :
اک بات اگر مجھ کو اجازت ہو تو پوچھوں
حل کر نہ سکے جس کو حکیموں کے مقالات
جب تک میں جیا خیمہ افلاک کے نیچے
کانٹے کی طرح دل میں کھٹکتی رہی یہ بات
گفتار کے اسلوب پہ قابو نہیں رہتا
جب رُوح کے اندر متلاطم ہوں خیالات
وہ کون سا آدم ہے کہ تُو جس کا ہے معبود
وہ آدمِ خاکی کہ جو ہے زیرِ سماوات؟
مشرق کے خداوند سفیدانِ فرنگی
مغرب کے خُداوند درخشندہ فلزات
گویا دہریت کے فلسفے کو مغرب کی سرمایہ دارانہ تہذیب نے ہی جنم دیا ہے ۔ سرمایہ داری نظام نے خُدا کو دُنیا بھر سے عملاً بے دخل کر رکھا ہے ۔ مشرق کے محکوم اپنے فرنگی آقاؤں کی پرستش میں مصروف ہیں تو اہلِ فرنگ زر کی پرستش میں منہمک ہیں۔ ایسے میں لینن خُدا سے یہ چبھتا ہوا سوال پوچھتے ہیں کہ وہ آدم کہاں ہے جو خُدا پرست ہو؟۔۔۔
سرمایہ داری نظام نے لوگوں کو اپنے استحصالی چنگل میں یوں دبوچ رکھا ہے کہ وہ اپنے خالقِ اکبر تک کو بھول بیٹھے ہیں۔ خُدا کی بارگاہ میں لینن کی یہ فریاد اُمید اور رجائیت پر آ تمام ہوتی ہے ۔ یہ رجائیت مغرب میں اشتراکیت کے ہاتھوں سرمایہ دارانہ نظام کی شکست کے آثار سے پیدا ہوئی ہے ۔فریاد میں یک بہ یک نمودار ہو جانے والی اُمید کی تان بھی ایک سوال پر آ ٹوٹتی ہے ۔ وہ آتشیں سوال یہ ہے کہ روزِ مکافات کب آئے گا اور سرمایہ پرستی کا سفینہ کب ڈوبے گا؟:
آثار تو کچھ کچھ نظر آتے ہیں کہ آخر
تدبیر کو تقدیر کے شاطر نے کیا مات
میخانے کی بُنیاد میں آیا ہے تزلزل
بیٹھے ہیں اسی فکر میں پیرانِ خرابات
چہروں پہ جو سرخی نظر آتی ہے سرِ شام
یا غازہ ہے یا ساغر و مینا کی کرامات
تو قادر و عادل ہے مگر تیرے جہاں میں
ہیں تلخ بہت بندۂ مزدور کے اوقات
کب ڈوبے گا سرمایہ پرستی کا سفینہ؟
دُنیا ہے تری منتظر اے روزِ مکافات؟
بارگاہِ خُداوندی میں لینن کی فریاد کو فرشتے بھی چپکے چپکے مگر بڑے انہماک کے ساتھ سُن رہے تھے ۔ لینن کے اُٹائے ہوئے درج بالا آخری سوال تک پہنچتے پہنچتے وہ اتنے جذباتی ہو گئے کہ انھوں نے بے ساختہ لینن کی ہم نوائی شروع کر دی۔ نظم کا یہ حصہ فرشتوں کے گیت پر مشتمل ہے ۔ فرشتوں کے خیال میں خلقِ خُدا پر اس پیہم ظلم و ستم کا بنیادی سبب یہ ہے کہ انفرادی اور اجتماعی زندگی عشق کی گرمی سے محروم ہو کر رہ گئی ہے ۔ چنانچہ وہ اللہ میاں سے یوں ہمکلام ہوتے ہیں:
خلقِ خُدا کی گھات میں رند و فقیہ و میر و پیر
تیرے جہاں میں ہے وہی گردشِ صبح و شام ابھی
تیرے امیر مال مست، تیرے فقیر حال مست
بندہ ہے کوچہ گرد ابھی، خواجہ بلند بام ابھی
دانش و دِین و علم و فن بندگی ہوس تمام
عشقِ گرہ کُشاے کا فیض نہیں ہے عام ابھی
جوہر زندگی ہے عشق، جوہر عشق ہے خودی
آہ کہ ہے یہ تیغِ تیز پردگی نیام ابھی!
فرشتے لینن کے نقطۂ نظر کی پُرزور ، مدلل اور مؤثر تائید کرتے وقت اس حقیقت کو بڑی خوبی کے ساتھ نمایاں کرتے ہیں کہ ’’رند و فقیہ و میر و پیر‘‘سبھی خلقِ خُدا پر جبر و استبدادکے پہاڑ توڑنے والوں ہی میں شامل ہو گئے ہیں۔ گویا وہ مذہب جو خلقِ خُدا کوجبر و استبداد سے نجات دلانے کے لیے آیا تھا اُسے اِن اداروں نے جبر و استبداد کادستگیر اور خلقِ خُدا کا دشمن بنا کررکھ دیا ہے ۔ ’’دانش و دین‘‘ اور ’’علم و فن‘‘خُدا کی بندگی کی بجائے ہوس کی پوجا میں مشغول ہیں۔ اب وقت ا گیا ہے کہ عشق کی تلوار نیام سے باہر آئے اور خلقِ خُدا کو ظلم و ستم اور جبرواستبداد سے نجات دلائے ۔
یہ لینن اور فرشتوں کے فکر و اظہار میں اس کامل ہم آہنگی ہی کا کرشمہ ہے کہ اللہ میاں فرشتوں کو حکم دیتے ہیں کہ وہ فی الفور دُنیا میں مروج سرمایہ دارانہ نظام کو مٹا کر زمین پر اللہ کی حاکمیت کا بول بالا کر دیں۔ نظم کے اس تیسرے اور آخری حصے کاعنوان ہے : ‘‘فرمانِ خُدا ،فرشتوں سے ’’۔ آئیے خُدا کا یہ فرمان سارا کا سارا پڑھ ڈالیں:
اُٹھو میری دُنیا کے غریبوں کو جگا دو
کاخِ امرا کے در و دیوار ہلا دو
کنجشکِ فرومایہ کو شاہیں سے لڑا دو
سلطانء جمہور کا آتا ہے زمانہ
جو نقشِ کہن تم کو نظر آئے مٹا دو
جس کھیت سے دہقاں کو میسر نہیں روزی
اس کھیت کے ہر خوشۂ گندم کو جلا دو
کیوں خالق و مخلوق میں حائل رہیں پردے
پیرانِ کلیسا کو کلیسا سے اُٹھا دو
حق را بسجودے ، صنماں را بطوافے
بہتر ہے چراغِ حرم و دیر بجھا دو
میں ناخوش و بیزار ہوں مر مر کی سلوں سے
میرے لیے مٹی کا حرم اور بنا دو
تہذیبِ نوی کارگہِ شیشہ گراں ہے
آدابِ جنوں شاعرِ مشرق کو سکھا دو
یہ نظم اقبال کی اسلامی انقلابی آرزو مندی کی دین ہے ۔ ’’یوں نہ تھا، میں نے فقط چاہا تھا یوں ہو جائے ‘‘ کے
مصداق اقبال کی یہ تمنا تھی کہ روسی اشتراکیت دہریت یعنی ’’لا‘‘ کی منزل سے آگے بڑھ کر اِلّا اللہ کے مقام تک پہنچے ۔ سوال یہ ہے کہ اقبال روس کے اشتراکی انقلاب کو دورِ حاضر میں اسلام انقلاب کا ایک ناگزیر پیش خیمہ کیوں سمجھتے ہیں؟ اس سوال کا ایک سرسری سا جواب تو یہ ہو سکتا ہے کہ سرمایہ دار یورپ نے قریب قریب ساری دُنیائے اسلام کو غلامی کے جال میں گرفتار کر رکھا تھا۔ جن کے لیے فقط اللہ کی بندگی مقدر ہو چکی تھی اُن کا حکمران طبقہ فرنگ کی بندگی پر نازاں تھا۔ ماہمہ عبدِ فرنگ آں عبدہ’ اور ماکلیسا دوست، ما مسجد فروش۔ یورپ کے اشتراکی انقلاب نے سرمایہ داری نظام کی خُدائی کے سامنے ’’لا‘‘ کا نعرہ بلند کر دیا تھا۔ سرمایہ دارانہ استعمار کی خُداوی سے انکار نے مسلمانوں کے سامنے سامراجی غلامی سے انکار کا راستہ روشن کر دیا تھا۔
مغرب میں سرمایہ داری اور اشتراکیت کے مابین کشمکش نے مغربی سامراج کو کمزور کر دیا تھا۔ ایسے میں اقبال اپنے ارتقائی نقطۂ نظر کے ساتھ یہ سوچنے لگے تھے کہ روسی اشتراکیت سرمایہ داری نظام کے خاتمے کے بعد کسی روحانی مسلک کو اپنا لے گی۔ یہ بات انھوں نے سرفرانسس ینگ ہسبنڈ کے نام اپنے کھلے خط میں بھی برملا کہی تھی کہ اشتراکی روس کے بارے میں یہ سوچ غلط ہے کہ وہ کبھی بھی کوئی روحانی مسلک نہ اپنائے گا۔ انھوں نے اس خط میں دھمکی آمیز انداز میں سرفرانسس کو بتایا تھا کہ جب اشتراکیت خدا پر ایمان لے آئے گی تب اسلام کے بہت قریب آ جائے گی۔ چنانچہ اقبال سرمایہ دارانہ استعمار کی شکست و ریخت میں اشتراکی روس کے کردار کو اسلامی انقلاب کا اوّلین مرحلہ سمجھتے تھے ۔
اقبال کی اس آرزومندی کو فلسفیانہ انداز میں سمجھنا ہو تو ہمیں اقبال کی کتاب ’’پس چہ باید کرد اے اقوام شرق‘‘ کا وہ باب پڑھنا چاہیے جس میں کلمہ طیبہ کی تفسیر کی گئی ہے ۔ لا الہ الا اللہ کے زیرِ عنوان اقبال لا اور اِلّا کو نفی اور اثبات کی دو منزلیں قرار دیتے ہیں۔ جھوٹے خُداؤں کی نفی کے بغیر سچے خُدا کا اثبات ناممکن ہے ۔ اشتراکی روس نے فرنگی تہذیب کے اندر بندگی اور خواجگی کے درمیان جنگ برپا کر دی تھی۔ اقبال نے سرمایہ داری اور اشتراکیت کے درمیان اس جنگ کے احوال و مقامات ‘‘پیامِ مشرق’’ میں پیش کیے ہیں۔ یوں تو انھوں نے فلسفی اور مزدور، موسیولینن اور قیصرولیم، نوائے مزدور کی سی نظموں میں اس جنگ کی مصوری متعدد حسین پیرایہ ہائے بیان میں کی ہے مگر نظم ‘‘قسمت نامۂ سرمایہ دار و مزدور’’ دُنیائے ادب میں اپنا جواب نہیں رکھتی۔ اس مختصر نظم میں اقبال مزدور کی سادہ لوحی اور سرمایہ دار کی عیاری کو خوبصورت طنزیہ انداز میں یوں بیان کرتے ہیں:
غوغاے کارخانۂ آہنگری زمن
گلبانگِ ارغنونِ کلیسا از آن تو
نخلے کہ شہ خراج برومی نہد زمن
باغ بہشت و سدرہ و طوبا از آن تو
تلخابۂ کہ دردِ سر آرد از آنِ من
صہبائے پاکِ آدم و حوا از آن تُو
مرغابی و تدرو و کبوتر از آنِ من
ظلِ ہما و شہپر عنقا از آن تو
این خاک و آنچہ در شکم او از آنِ من
وز خاک تا بہ عرش معلا از آن تو
اس تقسیم میں سرمایہ دار نے تمام تر مادی وسائل تو اپنے حصے میں رکھ لیے اور سارے کے سارے روحانی خواب و خیال مزدور کی جھولی میں ڈال دیے
۔ قرآن کریم کے معاشی تصورات کی روشنی میں جب وہ یورپ میں برپا سرمایہ دار اور مزدور کی کشمکش کا مطالعہ کرتے ہیں تو انھیں قرآن مزدور کا دستگیر دکھائی دیتا ہے ۔ ’’بانگِ درا‘‘کی ایک چھوٹی سی نظم میں وہ کہتے ہیں:
کارخانے کا ہے مالک مردکِ ناکردہ کار
عیش کا پُتلا ہے ، محنت ہے اسے ناسازگار
حکم حق ہے لیس الانسان الّا ما سعیٰ
کھائے کیوں مزدور کی محنت کا پھل سرمایہ دار
سرمایہ دار اور ممدور کے اس قسمت نامہ پر اقبال کے ابلیس کا یاد آ جانا قدرتی سی بات ہے ۔ اپنی مجلسِ شوریٰ کے اجلاس سے افتتاحی کلمات میں ابلیس اپنے اس کارنامے پر بھی ناز کرتا ہے کہ ناداروں کو اُسی نے تقدیر کا سبق پڑھایا ہے اور سرمایہ داروں کو اُسی نے سرمایہ داری کے جنوں میں مبتلا کر رکھا ہے ۔ اقبال سمجھتے تھے کہ اشتراکیت نے یورپ میں جہاں بندۂ مزدور کو اپنا مقدرخود سنوارنے کا درس دیا ہے وہاں مزدوروں کو سرمایہ داری نظام کے خالق و مالک ابلیس کے سامنے ‘‘لا’’ کا نعرہ بلند کرنے کا حوصلہ بھی بخشا ہے ۔ ابلیسی نظام کی نفی خُدائے واحد کی تلاش کا اوّلیں مرحلہ ہے ۔ اس مرحلے پر ‘‘لا’’ کی کارفرمائی دیکھیے :
ہم چناں بینی کہ در دورِ فرنگ
بندگی باخواجگی آمد بجنگ
روس راقلب و جگر گردیدہ خوں
از ضمیرش حرفِ لا آمد بروں
آن نظامِ کہنہ را برہم زدست
تیز نیشے بر رگِ عالم زدشت
کرہ ام اندر مقاماتش نگہ
لا سلاطیں ، لاکلیسا، لا الٰہ
فکرِ اُو در تند بادِ لا بماند
مرکبِ خود را سوئے اِلّا نراند
آیدش روزے کہ از زورِ جنوں
خویش را زیں تند باد آرد بروں
در مقامِ لا نیا ساید حیات
سوے الّا می خرامد کائنات
لا و اِلّا ساز و برگ امتاں
نفی بے اثبات مرگِ اُمتاں
در محبت پختہ کے گردد خلیل
تانگردد لا سوے اِلّا دلیل
اے کہ اندر حجرہ ہا سازی سخن
نعرۂ لا پیش نمروداں بزن
ایں کہ می بینی نیر زد بادوجو
از جلالِ لا الٰہ آگاہ شو
ہر کہ اندر دستِ اُو شمشیرِ لاست
جملہ موجودات را فرمانرواست

Summary
Review Date
Reviewed Item
اقبال اور معاشی انصاف کی تلاش۔۔۔(1)
Author Rating
51star1star1star1star1star

اپنا تبصرہ بھیجیں