بھارتی سپریم کورٹ کے4 سینئرججوں کےچیف جسٹس پرالزامات

بھارتی سپریم کورٹ کے 4 ججوں نے چیف جسٹس سپریم کورٹ پر عدلیہ میں انتظامی معاملات درست طریقے سے نہ چلانے اور مخصوص مقدمات جونیئر ججوں کو دیئے جانے کے الزامات عائد کر دیئے ۔ بھارتی میڈیا نے ججوں کی پریس کانفرنس کو بغاوت قرار دے دیا۔
بھارتی عدلیہ کی تاریخ میں اپنی نوعیت کا منفرد واقعہ اس وقت پیش آیا جب 4 ججز نے چیف جسٹس سپریم کورٹ کو شکایتی خط لکھا کر کہا احتجاج کیا کہ آزاد عدلیہ کے بغیر بھارت میں جمہوری نظام برقرار نہیں رہ سکے گا۔بغاوت سے پھرپور اس پریس کانفرنس کے بعد بھارتی سپریم کورٹ کے مزید 2 ججوں نے پریس کانفرنس کرنے والے 4 ججوں سے ملاقات کی ۔



مزید پڑھیں :پتھروں اورکوڑا کرکٹ کےڈھیر پرکس نےکتنے سال گزارے؟

بھارتی ججوں نے پریس کانفرنس میں کہا کہ چیف جسٹس کا مواخذہ کرنے والے ہم نہیں ہیں،عدلیہ کے ادارے کو تحفظ نہ ملا تو جمہوریت خطرے میں ہوگی۔بھارتی ججوں کی پریس کانفرنس کے بعد وزیر اعظم مودی سرگرم ہو گئے اور انہوں نے وزیر قانون سے ملاقات کی اور ہائیکورٹ اور سپریم کورٹ میں ججوں کی تقرری پر تبادلہ خیال بھی کیا۔

Summary
Review Date
Reviewed Item
بھارتی سپریم کورٹ کے4 سینئرججوں کےچیف جسٹس پرالزامات
Author Rating
51star1star1star1star1star

اپنا تبصرہ بھیجیں